صدر مملکت اور چینی صدر کی ملاقات، کرونا وائرس کی روک تھام پر گفتگو

بیجنگ: (پاکستان فوکس آن لائن)صدر عارف علوی نے بیجنگ میں چین کے ہم منصب شی جن پنگ سے بھی ملاقات کی۔ملاقات کے دوران دونوں رہنمائوں نے پاکستان اور چین کے درمیان آزمودہ دوستی کو مزید بلندیوں تک پہنچانے کا عزم ظاہر کیا۔یہ بھی عہد کیا گیا کہ نہ صرف دونوں ملکوں بلکہ پورے خطے کیلئے بھی موجودہ منفرد تعلقات کو مزید مستحکم کیا جائے گا۔ملاقات کے دوران پاک چین دفاعی تعلقات کے بارے میں بھی بات چیت کی گئی ، اس ملاقات میں خطے کی صورتحال خصوصا کرونا وائرس کے پھیلا واور اس کی روک تھام پر خصوصی بات چیت بھی کی گئی۔ اس موقع پر دونوں ممالک کے درمیان مختلف مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط بھی کیے گئے۔اس سے قبل صدر مملکت نے چین کے وزیراعظم لی کی چیانگ سے بھی ملاقات کی اور کرونا وائرس کے خلاف چین کے ساتھ مکمل یکجہتی اور پاکستان کی جانب سے حمایت کا اظہار کیا۔دونوں رہنمائوں کے درمیان ملاقات بیجنگ کے گریٹ ہال میں ہوئی۔ صدر مملکت نے اس موقع پر کہا کہ پاکستان اور چین ہر آزمائش پر پورا اترنے والے دوست اور آہنی برادرز ہیں جو ہمیشہ ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے رہے ہیں۔ دونوں ممالک کے تعلقات باہمی اعتماد اور مفید تعاون پر مبنی ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان چین نے دنیا کو بتایا ہے کہ وہ بقائے باہمی اور عدم مداخلت پر یقین رکھتے ہیں۔ پاکستان نے ہمیشہ مشکل وقت میں چین کا ساتھ دیا ہے اور کرونا وائرس کی وبا سے نمٹنے کے چیلنج میں بھی اس کی حمایت جاری رکھے گا۔صدر مملکت کا کہنا تھا کہ چین نے کرونا وائرس کی روک تھام کے لئے موثر اقدامات کئے ہیں۔ اس موقع پر چینی وزیراعظم نے صدر مملکت اور ان کے وفد کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ چین اور پاکستان کی دوستی وقت کے ساتھ مزید مضبوط ہوئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چین میں کرونا وائرس سے پیدا ہونے والی وبا پر وزیراعظم عمران خان اور پاکستان کی حکومت نے چین کے لئے اظہار ہمدردی کے پیغامات بھیجے اور وبا پھوٹنے کے فوری بعد پاکستان نے چین کو طبی امداد فراہم کی۔ ہم چین میں پاکستان کے خیر سگالی کے جذبے پر شکر گزار ہیں۔چینی وزیراعظم نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ پاکستان میں بھی اب کرونا وائرس کے کچھ کیسز ظاہر ہوئے ہیں جن کے پیش نظر حکومت پاکستان اقدامات کر رہی ہے۔ ہمیں ایسے چیلنجز سے مشترکہ طور پر نمٹنے کے لئے اپنے تعاون کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔لی کی چیانگ نے کہا کہ ہم اس حوالے سے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتے ہیں۔ انسانیت کو درپیش اس چیلنج کے پیش نظر بین الاقوامی تعاون بہت اہم ہے۔ اس موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وفاقی وزیر منصوبہ بندی، ترقی واصلاحات اسد عمر، چین کے وزیر خارجہ، چین میں پاکستانی سفیر اور دیگر سینئر حکام بھی موجود تھے۔
صدر مملکت کے دورے کے حوالے سے جاری ہونے والے مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ دونوں ملکوں کی قیادت کے درمیان ملاقاتوں میں مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیاگیا۔ صدر مملکت نے چینی قیادت کو مقبوضہ ریاست کی تازہ ترین صورتحا ل سے آگاہ کیا۔ چینی قیادت نے کہا کہ یہ تنازعہ سلامتی کونسل کی قراردادوں اور دوطرفہ معاہدوں کی روشنی میں پر امن طریقے سے حل ہونا چاہئے۔ چینی قیادت نے کہا کہ چین ایسے یکطرفہ اقدامات کی مخالفت کرتا ہے جس سے صورتحال پیچیدہ ہو۔
پاکستان اور چین نے امریکہ اور طالبان کے مابین امن معاہدے کا خیرمقدم کیا ہے اور امید ظاہر کی ہے کہ افغانوں کے مابین مذاکرات اگلا منطقی اقدام ہوگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *