جمال خاشقجی کے قتل کے احکامات نہیں دیے: سعودی ولی عہد

سعودی عرب، ایران کے درمیان جنگ عالمی معیشت کیلئے تباہ کن ہوگی

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا ہے کہ صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے احکامات میں نے جاری نہیں کیے تھے تاہم سعودی رہنما ہونے کے ناطے ذمے داری قبول کرتا ہوں۔امریکی چینل کو دیئے گئے انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ جمال خاشقجی کا قتل سعودی اہلکاروں کے ہاتھوں ہوا، یہ ایک غلطی تھی اور یقینی بنایا جائے گا کہ آئندہ ایسا نہ ہو۔
ولی عہد محمد بن سلمان نے ایران کے حوالے سے بات کرتے ہوئے خبردار کیا کہ اگر عالمی برداری ایران کو روکنے اور اس کے خلاف ٹھوس کارروائی کے لیے آگے نہیں آئی تو تیل کی قیمتوں میں ایسا ناقابل تصور اضافہ ہوسکتا ہے جو ہم نے زندگی میں نہیں دیکھا ہوگا جب کہ ایران کو نہ روکنے سے عالمی مفادات کے لیے مزید خطرات بڑھیں گے۔سعودی تیل تنصیبات پر حملے میں ایران کے ملوث ہونے سے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ ایران کے ساتھ مسئلے پر فوجی کے بجائے سیاسی حل کو ترجیح دیں گے، ایران اور سعودی عرب کے درمیان جنگ عالمی معیشت کو تباہ کردے گی۔
یاد رہے سعودی وزارتِ دفاع کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے اپنے ایک بیان کہا تھا کہ تیل کی تنصیبات پر حملے کے لئے استعمال کئے گئے ہتھیاروں کے ملبے سے ثابت ہوتا ہے کہ اس کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے ڈرونز حملے کے شواہد پیش کرتے ہوئے کہا کہ 18 ڈرونز اور 7 کروز میزائل یمن کی جانب سے نہیں داغے گئے، شواہد سے پتہ چلتا ہے کہ حملہ شمال کی جانب سے کیا گیا ہے، بلاشبہ اس کی مدد ایران نے کی ہے۔انہوں نے کہا کہ سعودی عرب اب بھی اس معاملے پر کام کر رہا کہ اس حملے کو اصل میں کس جگہ سے کیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ خریس میں کروز میزائل حملے سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس کے پیچھے ایران کے پراکسی حوثی باغی ہیں، ابھی یہ تفصیل نہیں دی جا سکتی کہ حملہ کس جگہ سے کیا گیا، یہ جیسے ہی واضح ہو گا اس کے بارے میں بتایا جائے گا۔
دوسری جانب اسرائیل نے دعویٰ کیا تھا کہ سعودی عرب کی آئل فیلڈز پر ہفتے کی علی الصبح ہونے والے حملوں میں عراق کی سرزمین استعمال کی گئی تھی۔سعودی عرب میں آئل فیلڈز پر ہونے والے حملوں کے بعد امریکہ کے سیکریٹری خارجہ مائیک پومپیو نے دعویٰ کیا تھا کہ حملے حوثی باغیوں نے نہیں کیے بلکہ ان حملوں میں براہ راست ایران ملوث ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے امریکی سیکریٹری آف اسٹیٹ کی جانب سے عائد کردہ الزامات کی سختی سے تردید کی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *