پاکستان اور آئی ایم ایف کے مذاکرات 10 روز تک جاری رہیں گے

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن)پاکستان اور عالمی مالیاتی ادارے ( آئی ایم ایف) کے درمیان مذاکرات کا آج دوسرا روز ہے ۔میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان بات چیت 10 روز تک جاری رہے گی۔آج محصولات، ایکسچینج ریٹ، انٹرسٹ ریٹ ، بجلی اورگیس کی قیمتوں پر بات چیت جاری رہے گی ۔ آئی ایم ایف نئے مالی سال سے بھرپور ٹیکس اصلاحات چاہتا ہے۔پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان بعض امور پر پہلے سے ہی اتفاق رائے ہو چکا ہے۔ ایمنسٹی اسکیم کے حوالے سے آئی ایم ایف سے بات چیت جاری ہے ۔ تاہم ایمنسٹی اسکیم پر آئی ایم ایف کے تحفظات سامنے آئے ہیں۔آئی ایم ایف کے تحفظات کی وجہ سےایمنسٹی اسکیم کے نافذ ہونے میں مزید تاخیر کا امکان ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق آئی ایم ایف ایمنسٹی اسکیم کے تحت دی جانے والی ٹیکس چھوٹ کے خلاف ہے۔پاکستانی حکام آئی ایم ایف حکام کو ایمنسٹی اسکیم پر آمادہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ مالیاتی امور پر آنے والے دنوں میں بات چیت ہو گی۔ مذاکرات میں اخراجات کے حوالے سے ڈیٹا شیئر کیا جا رہا ہے۔ حکومت موجودہ نجکاری پروگرام آئی ایم ایف کے سامنے پیش کرے گی۔

یاد رہے گزشتہ روز ہونے والے اجلاس کے بعد ذرائع کے حوالے سے خبر سامنے آئی تھی کہ پاکستان نے آئی ایم ایف کو مذاکرات کے پہلے روز پانچ سو ارب روپے کے نئے ٹیکسز لگانے کی یقین دہانی کرا دی ہے ۔ نئے بجٹ میں ایف بی آر وصولیوں کا ہدف 4500 ارب روپے مقرر کیا جائے گا۔گزشتہ روز آئی ایم ایف مشن کی سربراہی ارنستو رمریزریگو نے کی اور پاکستانی وفدکی قیادت سیکرٹری خزانہ یونس ڈھاگا نے کی ۔ ٹیکس حکام نے آئی ایم ایف وفد کو ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کے خدوخال سے آگاہ کیا ۔ذرائع کے مطابق مذاکرات میں پاکستان کی جانب سے وفد کو پانچ سو ارب روپے کے نئے ٹیکسز لگانے کی یقین دہانی کرائی گئی ۔۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ بجٹ میں ایف بی آر کی وصولیوں کا ہدف 4500 ارب روپے مقرر کیا جائے گا ۔۔ پاکستان آئی ایم ایف سے آٹھ سے نو ارب ڈالرز کے بیل آؤٹ پیکیج کا خواہشمند ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *