خانہ کعبہ اور حجر اسود کوچھونا منع ، حج کے متعلق نئےقواعدوضوابط جاری

منیٰ میں جمرات کی رمی کے لیے سینیٹائز کنکریاں فراہم کی جائیں گی

ریاض: (پاکستان فوکس آن لائن)مکہ مکرمہ کے گورنر شہزادہ خالد الفیصل بن عبدالعزیز نے حج 2020 سے متعلق صحت ضوابط جاری کردیے ہیں۔بین الاقوامی میڈیا کے مطابق حج کیلیے آئے افراد اور حج کرانے والوں کوحفاظتی ماسک اوردستانے پہننا ہوں گے،28 ذی القعدہ سے12ذی الحجہ تک منی، مزدلفہ،عرفات میں بغیراجازت جانامنع ہوگا۔حج کے جاری کردہ ضوابط میں بسوں میں مسافروں کی تعداد متعین ہوگی اور پورے سفر کیلئے ہر حاجی کی نشست متعین ہوگی، کسی بھی حاجی کو بس میں کھڑے ہونے کی اجازت نہیں ہوگی، مسافروں کو بس میں سفر کے دوران ماسک اتارنے کی اجازت نہیں ہوگی۔حج ضوابط کے مطابق آب زمزم کے کولرز کے پاس جمع ہونا منع ہوگا تاہم پانی پینے یا زمزم کیلیے ڈسپوزیبل بوتلیں،ڈبےاستعمال کیے جائیں گے، حاجی حضرات کو بند پیکٹوں والے کھانے پیش کیے جائیں گے اور کھانے پینے کے برتن دوبارہ استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہوگی جبکہ مسجد الحرام میں کھانے کی اشیا لانے پر پابندی اور خارجی صحنوں میں کھانے کی اجازت نہیں ہوگی۔سر کے بال تراشنے،مونڈھنے،داڑھی بنانیوالے ایک دوسرے کے آلات استعمال نہیں کرسکیں گے، لفٹ استعمال کرتے وقت سماجی فاصلہ رکھنا ہوگا، باجماعت نماز کی اجازت ہوگی تاہم نماز کے دوران ماسک پہننا لازمی ہوگا اور نمازی ایک دوسرے سے دو میٹر فاصلے کی پابندی کریں گے جبکہ جبکہ مسجد الحرام سے قالین اٹھالیے جائیں گے،اپنی جائے نماز استعمال کرنے کی تاکید کی جائے گی۔حج ضوابط میں خانہ کعبہ یا حجراسود کو چھونا منع ہوگا، صفا و مروہ کی سعی ہر منزل سے ہوگی،سعی کے دوران سماجی فاصلے کی پابندی کرنا ہوگی اور طواف کی جگہ صفا ومروہ کے علاقے کو حاجیوں کے ہر کارواں کے بعد سینیٹائز کیا جائے گا جبکہ جمرات کی رمی کے لیے پیک شدہ کنکریاں فراہم کی جائیں گی۔
طواف کے لیے مطاف جانے والوں کی قافلہ بندی ہوگی لیکن طواف کے دوران کم از کم ڈیڑھ میٹر کا فاصلہ رکھنا ہوگا،میدان عرفات اور مزدلفہ میں مخصوص مقامات پر قیام کی پابندی کرنا ہوگی،عبادت کے دوران حاجیوں کو ماسک اتارنے کی اجازت نہیں ہوگی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *