گوگل کی جانب سے ہواوے پر اینڈرائڈ کے استعمال پر پابندی کا امکان

نیویارک: (پاکستان فوکس آن لائن) گوگل نے چینی کمپنی ہواوے کے ساتھ کاروبار معطل کر دیا۔ گوگل کی جانب سے ہارڈ ویئر، سافٹ ویئر اور کچھ ٹیکنیکل خدمات کو معطل کیا گیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق امریکا کا چینی کمپنی ہواوے کو دنیا بھر میں بلیک لسٹ کرنے کے بعد گوگل نے بھی چینی کمپنی کو ہری جھنڈی دکھا دی۔گوگل ترجمان کے مطابق موجودہ ہواوے اسمارٹ فونز استعمال کرنے والے صارفین کے پاس گوگل کے ذریعے ایپلیکشنز ڈاؤن لوڈ کرنے کی سہولت موجود رہے گی جبکہ ہم ہواوے کے ساتھ کاروبار معطل کرنے کے احکامات اور اس کے اثرات کا جائزہ لیں گے۔گوگل کی جانب سے ہواوے پر پابندی کے بعد ہواوے کے صارفین گوگل پلے اسٹور استعمال نہیں کر سکیں گے بلکہ جی میل اور یوٹیوب ایپس استعمال کی بھی پابندی ہو گی۔
امکان ہے کہ رواں سال گوگل کے اگلے ورژن کے لانچ ہوتے ہی یہ ایپس ہواوے کی ڈیوائسز پر دستیاب نہیں ہوسکیں گی تاہم ہواوے اینڈرائڈ اوپریٹنگ سسٹم اوپن سورس لائسنس کے ذریعے اس نئے ورژن کو استعمال کر سکے گا۔
تفصیلات کے مطابق گوگل نے موبائل فون بنانے والی دنیا کی دوسری بڑی کمپنی ہواوے کے نئے ڈیزائنز پر اینڈرائڈ کی کچھ ایپلی کیشنز کے استعمال پر پابندی لگا دی ہے جس کی وجہ سے ہواوے کے صارفین مشکلات کا شکار ہوسکتے ہیں۔یہ پابندی اس وقت سامنے آئی ہے جب ٹرمپ انتظامیہ نے ہواوے کو ان کمپنیوں کی فہرست میں شامل کردیا جن سے امریکی فرمز لائسنس کے بغیر کاروبار نہیں کر سکیں گی۔ ہوائے کے موجودہ صارفین ابھی ایپس اور گوگل پلے سروس کو اپڈیٹ کرنے کے اہل ہوں گے لیکن امکان ہے کہ اسی سال گوگل کے اگلے ورژن کے لانچ ہوتے ہی یہ ہواوے کی ڈیوائسز پر دستیاب نہیں ہوسکیں گی۔تاہم ہواوے اینڈرائڈ اوپریٹنگ سسٹم اوپن سورس لائسنس کے ذریعے اس نئے ورژن کو استعمال کر سکے گا۔امریکی پابندیوں کے بعد ہواوے کے چیف ایگزیکٹو رین زینگ فئی نے جاپانی میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہم پہلے سے ہی اس کے لیے تیار تھے۔کئی ممالک کی جانب سے ہواوے پر پہلے ہی شکوک و شبہات کا اظہار کیا جا رہا ہے۔سمجھا جاتا ہے کہ چین کی جانب سے ہواوے کی مصنوعات کو نگرانی کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔کمپنی کی جانب سے ان تمام الزامات کی تردید کی جا چکی ہے۔ہواوے کی جانب سے تردید کے باوجود کچھ ممالک نے ٹیلی کام کمپنیوں کو 5 جی موبائل نیٹ ورکس میں ہواوے کی مصنوعات کے استعمال پر پابندی لگادی ہے۔کمپنی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ہواوے اپنے ایپ کی تیاری کے لیے سخت محنت کر رہا ہے۔
واضح رہے کہ ہواوے پر یہ پابندی کمپنی کے لیے کسی دھچکے سے کم نہیں ہے کیونکہ اس سے ہواوے کی فروخت شدید متاثر ہو گی جبکہ پاکستان میں اسمارٹ فونز خریدنے والوں کو خیال رکھنا ہو گا کہ اب وہ کونسا اسمارٹ فون خریدیں۔گوگل کے مطابق اس وقت دنیا بھر میں ڈھائی ارب کے قریب ایکٹیو اینڈرائیڈ کسٹمرز موجود ہیں جبکہ ہواوے کا کہنا ہے کہ انہوں نے اس پابندی کی وجہ سے اینڈرائیڈ کے مقابلے میں سوفٹ ویئر پر کام شروع کر دیا ہے تاہم اس نئے سوفٹ ویئر کو ابھی صرف چائنہ میں ہی متعارف کرایا گیا ہے۔واضح رہے کہ امریکا نے چینی ٹیلی کام کمپنی ہواوے اور اس کی 70 سے زائد ذیلی اور اس سے منسلک کمپنیوں کو بلیک لسٹ کر دیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *