سعودی حکومت نے خواتین کو مرد ‘سرپرست کے بغیر سفر کی اجازت دیدی

ریاض: (پاکستان فوکس آن لائن) سعودی عرب نے پہلی بار خواتین کو مردوں کے بغیر بیرون ملک سفر کرنے کی اجازت دے دی۔
غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ‘کے مطابق اس تاریخی اقدام سے سلطنت میں طویل عرصے سے رائج سرپرستی کے نظام کا خاتمہ ہوگا، جس کے تحت بالغ خواتین کو قانونی طور پر نابالغ سمجھا جاتا ہے اور ان کے سرپرستوں (شوہر، والد اور دیگر مرد رشتہ دار) کو صوابدیدی اختیار ہوتا ہے۔
سعودی حکومت کی جانب سے یہ فیصلہ، جس کے لیے سماجی کارکنان کئی سالوں سے مہم چلا رہے تھے، خواتین کی جانب سے بڑے پیمانے پر سرپرستوں سے فرار ہونے کی کوشش کے بعد کیا گیا۔
سعودی عرب کی جانب سے ایک شاہی فرمان جاری کیا گیا جس کے مطابق سعودی خواتین کو اب نہ صرف مردوں کی اجازت کے بغیر پاسپورٹ بنانے کا اختیار حاصل ہوگا بلکہ وہ مردوں کے بغیر بیرون ملک سفر بھی کرسکیں گی اور انہیں بیرونِ ملک سفر کے لیے کسی محرم یا مرد نگران کی اجازت کی ضرورت نہیں ہوگی۔
سعودی شاہی فرمان میں کہا گیا کہ تمام بالغ شہری پاسپورٹ اور سفر کے لیے درخواست جمع کروا سکتے ہیں، 21 برس سے زائد عمر کی کوئی بھی خاتون اپنے مرد نگراں کی اجازت کے بغیر پاسپورٹ کے لیے درخواست جمع کروا سکتی ہے، یہی نہیں اب خواتین بچوں کی پیدائش بھی خود درج کروانے کے ساتھ ساتھ اپنی شادی اور طلاق کا بھی اندراج خود کرواسکتی ہیں۔
واضح رہے اس سے پہلے سعودی قانون کے مطابق تمام عمر کی خواتین پر لازم تھا کہ پاسپورٹ بنوانے اور بیرون ملک سفر کے لیے اپنے خاندان کے کسی فرد یعنی نگراں جیسے والد، شوہر یا بھائی کو ضرور ساتھ لے کر جائیں یا پھر کم از کم ان کی اجازت کے ساتھ سفر کریں گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *