وقت آگیا ہے کہ دنیا پاکستان کا مثبت چہرہ دیکھے،انتونیو گوتریس

کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کوابھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے: شاہ محمود قریشی

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن)سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ انتونیوگوتریس کاکہناہےکہ وقت آگیاہے کہ دنیا پاکستان کامثبت چہرہ دیکھے،پاکستان امن کےلیےبھرپوراقدمات کررہاہے. دورےکا مقصد یہی ہےکہ پاکستان کےمثبت چہرےکواجاگرکیاجائے۔
سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ انتونیو گوتریس کی دفتر خارجہ آمد کے موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے استقبال کیا۔ دوران ملاقات شاہ محمود قریشی نے انتونیو گوتریس کو مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے آگا ہ کیا،جبکہ افغان امن عمل کے حوالے سے بھی گفتگو کی گئی۔
بعد ازاں شاہ محمود قریشی نے انتونیو گوتریس نے مشترکہ نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ کو پاکستان آمد پر خوش آمدید کہتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان افغان امن عمل کیلئے کوشاں ہیں،افغان مہاجرین کے لیے سیکرٹری جنرل اور اقوام متحدہ کی کاوشیں قابل ستائش ہیں۔
انہوں نے کہا کہ سیکرٹری جنرل سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر بات چیت ہوئی ہے ،مقبوضہ کشمیر میں 200 دنوں سے لاک ڈاؤن جاری ہے ،کشمیر میں بھارت نے یکطرفہ اور غیر قانونی قدم اٹھایا،اقوام متحدہ امن و استحکام کے لیے کردار ادا کر سکتا ہے ،اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عمل درآمد یقینی بنانا ہو گا،بھارت نے اقوام متحدی کی قراردادوں کو بالائے طاق رکھ دیا۔ان کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کمیشن کو رسائی دی جائے۔
دوسری جانب انتونیو گوتریس نے کہا کہ پاکستانی افغان مہاجرین کے لیے بڑھے کھلے دل کا مظاہرہ کر رہے ہیں،پاکستان افغان مہاجرین کو بسانے والادوسرا بڑا ملک ہے ، دہائیوں تک پہلے نمبر پر تھا،40 سال سے مسائل کے باوجود پاکستان نے مہاجرین کو گلے لگایا اور افغانستان کی بھرپور میزبانی کی ، یو این امن مشنز میں پاکستان کے کردار کو سراہتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ وقت آگیا ہے کہ اب دنیا پاکستان کا مثبت چہرہ دیکھے، پاکستان امن کے لیے بھرپور اقدمات کر رہا ہے ۔میرے دورے کا مقصد بھی یہی ہے کہ پاکستان کے مثبت چہرے کو اجاگر کیا جائے۔ پاکستان محمد علی جناح کے نظریے اور علامہ اقبال کے فلسفہ کا ملک ہے ،پاکستان ملالہ یوسفزئی اور عبدالستار ایدھی کا ملک ہے ۔
ان کا مزید کہناتھا کہ پاک بھارت تعلقات پر تشویش ہے ،انسانی اور بنیادی حقوق کو یقینی بنانا ضروری ہے ،پاکستان اور بھارت ایل او سی اور ورکنگ باؤنڈری پر تحمل کا مظاہرہ کریں،بھارت اقوام متحدہ کےساتھ کئے گئے سیزفائر کے معاہدے کویقینی بنائے ، سفارتکار ی اور مذاکرات ہی مسئلے کا حل ہے ،دونوں ملکوں میں امن کے لیے یو این کردار ادا کر سکتا ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *