تحقیقاتی رپورٹ کے بعد ایکشن بھی شروع،وفاقی کابینہ میں بڑے پیمانے پر رد و بدل

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن)وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ میں ردوبدل کرتے ہوئے مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد کو عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے۔
آٹا اور چینی بحران کی رپورٹ آنے کے بعد وفاقی حکومت میں ہلچل مچ گئی۔ وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ میں ردوبدل کرتے ہوئے مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد کوبھی عہدے سے ہٹا دیا گیا ۔
قبل ازیں وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ میں ردوبدل کر دی اورسید فخرامام کو وزارت فوڈ سکیورٹی کا وفاقی وزیربنا دیا ہے جبکہ خسرو بختیار کو اکنامک افیئرز کا وزیر بنادیاگیا،اعظم سواتی کو نارکوٹکس کنٹرول کا وفاقی وزیر بنا دیا گیا،بابر اعوان کو پارلیمانی افیئرز کا مشیر مقرر کر دیا گیا ہے جبکہ حماد اظہر کو وفاقی وزیر صنعت و پیداوار مقرر کر دیا گیا۔ محمدشہزاد ارباب کو مشیر پارلیمانی امور کے عہدے سے ہٹا دیا گیا جبکہ وزیراعظم نے خالد مقبول صدیقی کا استعفیٰ منظور کر لیا ۔اس کے علاوہ امین الحق کو وفاقی وزیر ٹیلی کام کا قلمدان سونپ دیا گیاہے جبکہ ہاشم پوپلزئی کو سیکرٹری فوڈ سکیورٹی کے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے،عمر حمید کو سیکرٹری نیشنل فوڈ سکیورٹی بھی مقرر کر دیا گیا ہے۔
دوسری جانب آٹا چینی بحران رپورٹ کے بعد پہلا استعفیٰ بھی آ گیا ہے اور وزیر خوراک پنجاب سمیع اللہ چودھری نے استعفیٰ دے دیا۔جبکہ کمشنر ڈی جی خان نسیم صادق اور سابق ڈائریکٹر خوراک پنجاب ظفر اقبال کو او ایس اڈی بنادیا گیا ہے۔
واضح رہے کہ 4 اپریل کو گندم اور چینی بحرا ن پر ہونے والی تحقیقاتی رپورٹ ایف آئی اے کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کو پیش کی گئی ۔ جس میں انکشاف کیا گیا کہ چینی کے بحران کا سب سے زیادہ فائدہ حکمران جماعت کے رہنما جہانگیر ترین نے اٹھایا۔ جبکہ فائدہ اٹھانے والوں میں دوسرے نمبر پر وفاقی وزیر خسرو بختیار کے رشتہ دار ہیں ،اس کے علاوہ حکمران اتحاد میں شامل مونس الٰہی کی کمپنیوں کا پیسے بنانے میں تیسرا نمبر رہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *