شہبازشریف کی گرفتاری کی وجہ سامنے آگئی۔۔ شہباز شریف نے عبوری ضمانت کی درخواست خود واپس لی

لاہور ہائیکورٹ نے شہباز شریف کی عبوری ضمانت کا تحریری فیصلہ جاری کردیا جس کے مطابق درخواست ضمانت واپس لینے کی بنیاد پر مسترد کی گئی۔فیصلے کے مطابق عدالتی حکم کے بعد شہباز شریف کے وکلاء نے درخواست واپس لینے کی استدعا کی، جس کے بعد عدالت نے درخواست واپس لینے کی بنا پر مسترد کر دی۔ تفصیلی فیصلے کے مطابق شہباز شریف کو 3 جون کو دی گئی عبوری ضمانت کا حکم بھی عدالت نے واپس لے لیا۔تفصیلات کے مطابق شہباز شریف نے عبوری ضمانت کی درخواست خود واپس لی عبوری ضمانت واپس لینے کے بعد نیب نے شہبازشریف کو گرفتار کرلیا۔واضح رہےاپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی جانب سے عبوری ضمانت کے لیے درخواست ضمانت دائر کی گئی تھی جسے بعد ازاں واپس لینے کی بنیاد پر لاہور ہائیکورٹ نے درخواست ضمانت مسترد کردی ۔لاہور ہائیکورٹ میں جسٹس سردار احمد نعیم اور جسٹس فاروق حیدر نے شہباز شریف کے خلاف آمدن سے زائد اثاثے اور منی لانڈرنگ کیس کی سماعت کی۔ شہباز شریف خود اور مسلم لیگ ن کے دوسرے رہنما بھی کمرہ عدالت میں موجود تھے۔عدالتی حکم کے بعد شہباز شریف کے وکلا نے درخواست واپس لینے کی استدعا کی، جس کے بعد عدالت نے درخواست واپس لینے کی بنا پر مسترد کر دی۔ تفصیلی فیصلے کے مطابق شہباز شریف کو 3 جون کو دی گئی عبوری ضمانت کا حکم بھی عدالت نے واپس لے لیا۔اصل میں اس سے شہبازشریف کوفائدہ ہوا اورفائدہ یہ ہوا کہ اگر یہ ضمانت کی درخواست واپس نہیں لیتے تو یہ کیس لمبا چلتا ، اور عدالت اگر یہ آڈر دے دیتی کہ نیب کا موقف اور کسی حد تک ٹھیک موقف تھا اور یہ اگرآڈر میں آجاتا کہ نیب نے یہ یہ باتیں کی اور عدالت سمجھتی ہے کہ یہ ٹھیک موقف ہے اور ہم شہبازشریف کی درخواست مسترد کررہے ہیں اور ٹرائل کورٹ اس عدالت کی آبزرویشن کا اثر لئے بغیر میرٹ پرفیصلہ کرے توشہبازشریف کو نقصان ہوتا اب وہ آگے کورٹ میں یہ کہیں کہ ہم نے ضمانت کی درخواست خود واپس لی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *