کے الیکٹرک نے رات گئے بھی بجلی کی بندش شروع کردی،عوام بلبلا اٹھے

کراچی: (پاکستان فوکس آن لائن)کراچی کے مختلف علاقوں میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ نے عوام کا جینا محال کر دیا۔مختلف علاقوں میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 8 گھنٹے تک جا پہنچا جب کہ کے الیکٹرک نے رات گئے بھی بجلی کی بندش شروع کردی۔ شہر قائد کے مختلف علاقوں میں اعلانیہ اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے، اختر کالونی،کشمیر کالونی، محمود آباد، منظور کالونی، گجر چوک، پی ای سی ایچ سوسائٹی، گلستان جوہر، گلشن اقبال، الہلال سوسائٹی، کے ڈی اے اسکیم سیون، لیاقت آباد سی ون ایریا، گلستان جوہر بلاک 19، گلستان جوہر بلاک 8، عزیز آباد، کریم آباد،صدر، آئی آئی چندریگر روڈ اور ملیر سمیت مختلف علاقوں میں رات گئے سے بجلی کی فراہمی معطل ہے تو کہیں بجلی نے آنا اور جانا لگائے رکھا۔شہر میں بجلی کی بندش کا دورانیہ 8 گھنٹے تک جا پہنچے ہے اور کے الیکٹرک نے لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ علاقوں میں بھی لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری رکھا ہے۔شدید گرمی کے موسم میں بجلی کی طویل بندش سے شہریوں کے معمولات زندگی متاثر ہورہے ہیں تو وہیں آن لائن کلاسز والے بچوں کو بھی بجلی نہ ہونے کے باعث کلاسز لینے میں مشکلات پیش آرہی ہیں۔
ترجمان کے الیکٹرک کا کہنا ہےکہ کراچی ایٹمی بجلی گھر سے کےالیکٹرک کو ملنے والی 60 میگاواٹ بجلی کی سپلائی معطل ہے۔جب کہ ذرائع ایس ایس جی سی کا کہنا ہے کہ کے الیکٹرک کو 50 ایم ایم سی ایف ڈی اضافی گیس فراہم کی گئی ہے۔اس کے علاوہ پی ایس او ذرائع کے مطابق شہر میں بجلی کی طلب 3000 سے 3200 میگاواٹ ہے اور کے الیکٹرک کو فرنس آئل بھی مطلوبہ مقدار یعنی 61000 ٹن سے زائد فراہم کیا جاچکا ہے۔
دوسری جانب لاہور میں 220 کے وی غازی نیو لاہور ٹرانسمیشن لائن میں فنی خرابی سے کئی علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی۔ترجمان این ٹی ڈی سی کے مطابق فنی خرابی کے باعث 90 میگا واٹ کی لوڈ مینجمنٹ کا سامنا ہوا جب کہ این ٹی ڈی سی ٹیمیں فالٹ دورکرنے میں مصروف ہیں اور جلد ٹرانسمیشن لائن بحال کردی جائے گی۔این ٹی ڈی سی ترجمان کا کہنا ہے کہ 220 کے وی راوی گرڈ اسٹیشن سمیت این ٹی ڈی سی کا تمام سسٹم نارمل ہے۔ٹرانسمیشن لائن میں فنی خرابی کے باعث فتح گڑھ، تاج باغ، والٹن غازی روڈ صدر، دھرم پورہ، آر اے بازار، بیدیاں روڈ، ڈیفینس، وحدت روڈ اور سمن آباد سمیت متعدد علاقوں میں بجلی غائب ہوگئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *