لاہور ہائیکورٹ نے نیب کو حمزہ شہباز کی گرفتاری سے روک دیا

لاہور ہائیکورٹ نے حمزہ شہباز کی ضمانت میں توسیع کر دی

لاہور: (پاکستان فوکس آن لائن) لاہور ہائی کورٹ نے پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں توسیع کرتے ہوئے نیب کو حمزہ شہباز کی گرفتاری سے روک دیا۔اپوزیشن لیڈرپنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کی ضمانت سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔ کیس کی سماعت لاہور ہائیکورٹ کے 2 رکنی بینچ نے کی۔لاہور ہائیکورٹ نے حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت میں توسیع کرتے ہوئے انہیں 17 اپریل تک گرفتار نہ کرنے کا حکم دے دیا۔ حمزہ شہباز کی ضمانت ایک کروڑ روپے کے مچلکوں کے عوض منظور کی گئی۔ کمرہ عدالت میں بدنظمی پر عدالت نے لیگی وکلا پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ ہمیں یہ معاملات کنٹرول کرنا آتے ہیں۔ عدالت كا ماحول خراب كرنے کی اجازت کسی صورت نہیں دیں گے۔حمزہ شہباز كی عبوری ضمانت كی درخواست پر سماعت شروع ہوئی تو عدالت نے نیب کے وکیل سے استفسار کیا کہ آپ کس کیس میں حمزہ شہباز کو گرفتار کرنا چاہتے ہیں ؟نیب کی جانب سے جواب دیا گیا کہ وہ حمزہ شہباز کو آمدن سے زائد آثاثے بنانے میں گرفتار کرنا چاہتے ہیں۔ اُن کے خلاف کل تین مقدمات ہیں جب کہ صاف پانی اور رمضان شوگر مل میں ابھی تک وارنٹ گرفتاری جاری نہیں ہوئے ہیں۔حمزہ شہباز کے وکیل اعظم نذیر تارڑ نے مؤقف اختیار کیا کہ نیب نے بغیر كسی نوٹس كے گرفتار كرنے كی كوشش كی ہے۔ وہ پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف ہیں۔ اگر نیب كے پاس کوئی دستاویزاتی ثبوت ہیں توپیش کریں ہم جواب دیں گے۔نیب کے وکیل نے کہا کہ سپریم کورٹ کے احکامات کے تحت پیشگی بتانے کی ضرورت نہیں ہے جب کہ نیب كے قانون كے تحت جرم ناقابل ضمانت ہے۔حمزہ شہباز کے وکیل اعظم نذیر تارڑ اور پارٹی رہنما ملک احمد خان سابق اسپیکر پنجاب اسمبلی رانا اقبال ، رانا مشہود بھی لاہور ہائیکورٹ کے کمرہ عدالت میں موجود ہیں۔لاہور ہائی کورٹ کے باہر كکارکنان کی آمد كا سلسلہ جاری ہے۔ كباہرکارکنان کی عدالتی احاطے میں نعرےبازی جاری ہے ۔ ن لیگ کے كکارکنان حمزہ شہباز سے اظہار یکجہتی كکے لیے پہنچے ہیں۔دو دن قبل چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ سردار شمیم احمد نے حمزہ شہباز کی عبوری ضمانت کی درخواست پرسماعت کے بعد نیب کو انہیں آٹھ اپریل تک گرفتارنہ کرنے کی ہدایت کی تھی۔عدالت نے حمزہ شہاز کی درخواست ضمانت سماعت کے لیے مقرر کرتے ہوئےآج حمزہ شہباز کو خود پیش ہونے کا حکم دے تھا۔ عدالت نے ریمارکس میں کہا تھا کہ قانون کے مطابق عبوری درخواست ضمانت میں ملزم کا عدالت میں پیش ہونا لازمی ہے۔عدالتی فیصلے میں کہا گیا تھا کہ آٹھ اپریل کے بعد حفاظتی ضمانت غیرموثر تصورکی جائے گی، حفاظتی ضمانت کا حکم کیس پر اثر انداز نہیں ہو گا۔ادھر حمزہ شہباز کی گرفتاری کے لئے نیب نے چارج شیٹ تیار کر لی ہے ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ نیب کے 8 پراسیکیوٹر لاہور ہائی کورٹ میں پیش ہوں گے۔چارج شیٹ میں کہا گیاہے کہ حمزہ شہباز کے اثاثوں میں 200 فیصد تک اضافہ ہوا،تفتیش کے لئے حمزہ شہباز کی گرفتاری ضروری ہے۔ڈی جی نیب نے چیئرمین کو چارج شیٹ سے متعلق آگاہ کر دیاگیا ہے۔ ضمانت قبل از گرفتاری کی درخواست مسترد ہونے پر حمزہ شہباز کو گرفتار کیا جائے گا۔لاہور ہائی کورٹ کی جانب سے ہفتے کے روز نیب کو حمزہ کی گرفتاری سے روکا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *