ملک سے غربت کا خاتمہ، وزیراعظم کا نئی وزارت بنانے کا اعلان

ملک سے غربت کا خاتمہ کرنا ایک جہاد ہے، وزیراعظم

اسلام آباد میں غربت مٹاؤ پروگرام’’احساس‘‘ کی افتتاحی تقریب میں خطاب

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن)وزیراعظم عمران خان نے ملک سے غربت کے خاتمے کیلئے نئی وزارت اور آئین کے آرٹیکل میں ترمیم کا اعلان کر دیا ہے۔غربت کے خاتمے کیلئے پروگرام ”احساس اور کفالت“ کے اجرا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ملک سے غربت ختم کرنا جہاد ہے، اس کے خاتمے کیلئے اقدامات ناگزیر ہو چکے ہیں۔ غربت کے خاتمے کیلئے کوئی فارمولا نہیں، کئی اقدامات کرنا پڑتے ہیں۔وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پاکستان وہ واحد ملک ہے جو اسلام کے نام پر بنا۔ اس نے دنیا میں ایک مثال ملک بننا تھا لیکن ہم ریاست مدینہ کے اصولوں کیخلاف چلے گئے۔ مدینہ کی ریاست کی طرف واپس جانے کیلئے پروگرام ’’احساس اور کفالت‘‘ پہلا قدم ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ ہر کامیاب شخص کی زندگی سے لوگ سیکھنا چاہتے ہیں۔ دنیا میں سب سے کامیاب ہمارے پیارے نبی ﷺ تھے۔ انہوں نے ریاست مدینہ کی بنیاد رکھی جس کا پہلا اصول رحم تھا۔ مدینہ کی ریاست نے کمزور طبقے کی ذمہ داری لی۔ان کا کہنا تھا کہ ہمیں ہمیشہ مدینہ کی ریاست کے اصول یاد رکھنے چاہیں لیکن آج ہم ان کیخلاف چلے گئے ہیں اور ان پر عمل نہیں کر رہے۔ یورپ نے مدینہ کی ریاست کے اصول اپنائے اور آگے نکل گئے، وہاں کتے بھی بھوکے نہیں مرتے۔عمران خان نے سماجی بہبود کیلئے چین کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ ہمسایہ ملک نے تیس سال میں ستر کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالا۔ کیا کوئی یقین کر سکتا تھا کہ چین ایسا کر لے گا؟ چین نے اپنی پالیسیوں کے مطابق فیصلہ کیا اور ایسی پالیسی نہیں بنائی کہ چھوٹا سا طبقہ امیر ہو جائے۔وزیراعظم نے اس عزم کا اظہار کہا کہ قوم جب ارادہ کر لے تو اللہ تعالیٰ کامیابی دیتا ہے۔ میرا ایمان ہے پاکستان میں بھی ایک دن غربت ختم ہو جائے گی۔انہوں نے اعلان کیا کہ غربت کے خاتمے اور پروگرام ”احساس اور کفالت“ پر عملدرآمد کے لیے نئی وزارت بنائی جائے گی اور آرٹیکل 38 ڈی میں ترمیم کی جائے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک ہمیں یہ نہیں پتا کتنے لوگ غربت کی لکیر سے نیچے ہیں؟ پورے پاکستان سے ڈیٹا اکٹھا کریں گے جو رواں سال دسمبر تک مکمل ہو جائے گا۔ غربت مٹاؤ پروگرام میں 80 ارب روپے کا اضافہ کر رہے ہیں۔وزیراعظم نے اعلان کیا کہ جن کے پاس انصاف کارڈ نہیں ہوگا، وہ تحفظ پروگرام کے ذریعے کال کر کے مدد لے سکتے ہیں۔ تحفظ پروگرام کے ذریعے جب کوئی مشکل میں ہو گا تو اسے لیگل ایڈ بھی فراہم کی جائے گی۔ اس کے علاوہ پسماندہ علاقوں کے لیے ایجوکیشن گرانٹ بھی دیں گے۔ 57 لاکھ خواتین کے سیونگ اکاؤنٹ بنا کر انہیں موبائل فون بھی دینگے۔انہوں نے پروگرام کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ملک کی تحصیلوں میں 500 ڈیجیٹل حب بنائیں گے۔ پہلی دفعہ پاکستان میں ایسا پروگرام لا رہے ہیں جس کے ذریعے سٹریٹ چلڈرن کے لیے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کریں گے۔ معاشرے میں خواجہ سراؤں کیساتھ اچھا سلوک نہیں کیا جاتا، ہم ان کی بھی مدد کریں گے۔وزیراعظم نے بتایا کہ بھٹہ میں کام کرنے والوں کی بھی ’’تحفظ پروگرام‘‘کے ذریعے مدد کریں گے۔ بیت المال اگلے چار سال میں یتیم بچیوں کے لیے گھر بنائے جائیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *