وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن) وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں 17 نکاتی ایجنڈا پر غور کیا گیا۔ وفاقی کابینہ کرتارپور راہداری میں “پاکستانی ثقافتی مرکز” کے قیام کے لئے جگہ متعین کرنے کے معاملے پر غور کیا گیا۔وفاقی کابینہ ملک بھر میں 2020-2019 سیزن کےلئے گندم کی خریداری کی منظوری دینے کا فیصلہ کیا۔وفاقی کابینہ چیئرمین فیڈرل لینڈ کمیشن کی تقرری کی منظوری، چیئرمین فیڈرل بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن کی ڈیپوٹیشن مدت میں توسیع جبکہ چئیرمین اوگرا اور ممبران کی تنخواہ کے حوالے سے فیصلے پر عملدرآمد کا جائزہ لیا۔وزارتوں، ڈویژنوں میں تعیناتیوں کے لئے ریکروٹنگ و ٹیسٹنگ ایجنسی کی ہائرنگ کے طریقہ کار کا جائزہ لیا گیا جبکہ صوبائی کاوئنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ کو انویسٹی گیشن اینڈ پراسیکیوشن ایجنسی بنانے کی منظوری دی گئی۔کابینہ چئیرمین فیڈرل بورڈ آف ایجوکیشن کی ڈیپوٹیشن میں توسیع کی منظوری پر غور کیا گیا۔وفاقی کابینہ کو ملک میں رائج نظام تعلیم و تعلیمی اصلاحات پر بریفنگ دی گئئ۔ وزارت تعلیم و تربیت ملک میں یکساں نظام تعلیم رائج کرنے کے حوالے سے تجاویز بھی دیں گئیں۔کابینہ دبئی میں جرم کے مرتکب نعمان حنیف کو یو اے ای حکومت کو حوالے کرنے کی منظوری پر غور کرے کیا گیا جبکہ انفارمیشن کمیشن کی تنخواہ اور مراعات کی منظوری دی گئی۔کابینہ اویکوٹرسٹ پراپرٹی بورڈ کے ننکانہ صاحب ،سندھ اور گلگت بلتستان میں تین ایڈیشنل ممبران کی تعیناتی کی منظوری دی گئی۔کابینہ پاکستان اسٹینڈرڈ اینڈ کوالٹی کنٹرول اتھارٹی کےلئے ڈپٹی ڈی جی فنانس کی ڈیپوٹیشن پر تعیناتی کی منظوری دے گی۔ بلغاریہ اور پاکستانی نشینل میوزیم آف نیچرل ہسٹری کے درمیان مفاہمتی یادداشت کی منظوری بھی دی گئی۔کابینہ ملک میں موجود وفاقی حکومت کی خالی جائیدادوں کو فروخت کرنے کا جائزہ لیا گی۔اس کے علاوہ کابینہ پاک بوسنیا جوائنٹ اکنامک کمیشن کے قیام کے پیشگی فیصلہ کی منظوری دی گئی جبکہ چیئرمین پی ٹی وی بورڈ کی نامزدگی اور گزشتہ فیصلوں کی منظوری دی گئی۔

منی لانڈرنگ مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے، فواد چودھری

جلد دہشت گردی سے نجات پا لیں گے، وفاقی وزیر اطلاعات

وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات فواد چودھری نے کہا ہے کہ سی ٹی ڈی کو انسداد منی لانڈرنگ کے حوالے سے اختیارات دیدیے گئے ہیں۔ منی لانڈرنگ مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ ماضی کے حکمرانوں کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملک اقتصادی بدحالی کا شکار ہے۔ ماضی میں شریف خاندان اور زرداری نے کرپشن کی انتہا کی۔ شریف خاندان کے 95 فیصد اثاثوں کی ڈیکلریشن ٹی ٹی بیسڈ ہے۔ ٹی ٹی پیغامات کے ذریعے نواز شریف اور شہباز شریف کو پیسے باہر سے آتے رہے۔ حسن نواز، حسین نواز اور اسحاق ڈار عدالتوں کا سامنا نہیں کر رہے ہیں۔ متحدہ بانی، اسحاق ڈار، حسن اور حسین نواز پاکستان کے دیئے ہوئے تحفے ہیں، ہم چاہتے ہیں کہ برطانیہ انھیں واپس کرے۔انہوں نے کہا کہ ماضی کی حکومتوں کی بدعنوانی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے۔ ماضی کی حکومتوں کے کابینہ ارکان بھی میگا سکینڈلز میں ملوث تھے۔ ہل میٹلز کے اکاؤنٹ سے ایک ارب 82 کروڑ روپے نواز شریف کو منتقل ہوئے۔
فواد چودھری نے بتایا کہ وفاقی کابینہ نے منی لانڈرنگ کے حوالے سے شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ وفاقی کابینہ نے ایمنسٹی سکیم کی منظوری نہیں دی، سکیم پر بحث کی گئی لیکن ابھی تشنگی باقی ہے۔ کل دو بجے خصوصی اجلاس بلایا گیا ہے جس میں اثاثہ جات کے حوالے سے بات چیت ہوگی۔ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ سول، عسکری قیادت اور قوم نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کے حوالے سے متفق ہیں۔ نیشنل ایکشن پلان کے بعد دہشت گردی کے واقعات میں بہت کمی آئی ہے، اب اس پر مکمل عملدرآمد کیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ گریڈ 1 سے پانچ ملازمین کی بھرتیوں کے لیے پہلے اراکین اسمبلی کو کوٹے دیے جاتے تھے لیکن ہم نے اسے ختم کر دیا ہے، اب صرف میرٹ پر بھرتیاں ہوں گی۔ فواد چودھری نے بتایا کہ 17 اپریل کو وزیراعظم عمران خان نیا گھر ہاؤسنگ سکیم کا اففتاح کرنے جا رہے ہیں۔ پہلے مرحلے میں ایک لاکھ پینتس ہزار گھر بنائے جائیں گے۔پیپلز پارٹی کے دور حکومت سے پہلے سٹیل ملز نقصان میں نہیں تھی۔ دنیا کے چھ بڑے سرمایہ کاروں نے سٹیل ملز میں سرمایہ کاری کی پیشکش۔ کی ہے۔ سٹیل ملز کی پیداواری صلاحیت کو مزید بڑھایا جائے گا۔ یہ خیال رکھا جائے گا کہ سٹیل ملز ملازمین کے مفادات کو ٹھیس نہ پہنچے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *