قومی سلامتی داؤ پر لگانے والوں کیساتھ کوئی رعایت نہیں ہوگی

اسلام آباد: (پاکستان فوکس آن لائن)وفاقی کابینہ کے اجلاس میں مشیر خزانہ نے بجٹ کے حوالے سے ارکان کو بریفنگ دی جبکہ کابینہ اراکین نے مشیر خزانہ کو اپنی تجاویز بھی دیں۔وفاقی کابینہ کا اجلاس وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت ہوا۔ذرائع کے مطابق وفاقی کابینہ کے اجلاس میں مشیر خزانہ حفیظ شیخ بجٹ حکمت عملی 20-2019 کے دستاویزات پر اراکین کو بریفنگ دی اور بجٹ کے نمایاں خدوخال کے بارے میں کابینہ کو آگاہ کیا۔اجلاس میں تمام وزارتیں اور ادارے اپنے اثاثوں کے بارے میں کابینہ کو معلومات فراہم کرنا تھی جبکہ کچی کینال کی تعمیر میں کرپشن کے حوالے سے مشترکہ مفادات کونسل کے فیصلے پر غور کیا جانا تھا۔کابینہ اجلاس میں ملک میں امن و امان اور موجودہ معاشی صورتحال پر بھی غور کیا گیا۔اجلاس میں مزید نکات کا اضافہ کرتے ہوئے پاکستان کونسل آف ریسرچ ان واٹر ریسورسز کو وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی سے وزارت آبی وسائل کے حوالے کرنے پر غور کیا گیا۔بجٹ اجلاس کے دوران ارکان پارلیمنٹ اورصحافیوں کو کھانا اور ہائی ٹی دینے کی منظوری بھی زیر غور رہی جبکہ کابینہ شیخ زید میڈیکل انسٹیٹیوٹ لاہور کو پنجاب سے واپس لے کر وفاقی حکومت کے حوالے کرنے کی منظوری پر بھی تبادلہ خیال ہوا۔
وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا کر بریفنگ دیتے ہوئے فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ کچھ شرپسند قبائلی علاقوں میں ترقی کی راہ میں روڑے اٹکا رہے ہیں۔ اجلاس میں گزشتہ دنوں شمالی وزیرستان میں چیک پوسٹ پر ہونے والے حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی جبکہ شہید ایف سی اہلکار کے لیے دعا کی گئی۔انہوں نے واقعے کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ریاست کی رٹ چیلنج کرنے والوں نے فوجی چیک پوسٹ پر حملہ کیا۔ قبائلی افراد کو ورغلا کر جتھے کی شکل میں حملے کے لیے لایا گیا تھا۔فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ شرپسند عناصر بیرونی ایما پر شمالی وزیرستان میں انتشار پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور قبائلی علاقے کے امن کو داؤ پر لگا رہے ہیں۔ پاکستان کے تشخص اور قومی سلامتی کو داؤ پر لگانے والوں کیساتھ کوئی رعایت نہیں ہوگی۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے قبائلی علاقوں میں قیام امن کے لیے بڑی قربانیاں دیں۔ وزیراعظم نے قبائلی علاقوں میں جا کر عوام کو گلے لگایا اور وہاں کی ترقی کے لیے 102 ارب روپے کے فنڈز مختص کیے۔
معاون خصوصی برائے اطلاعات نے بتایا کہ وفاقی کابینہ میں بچوں کیساتھ زیادتی کے واقعات بڑھنے پر تشویش کا اظہار کیا گیا۔ وزیراعظم نے انٹرنیٹ کے غلط استعمال سے متعلق اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔ وزیراعظم نے متعلقہ حکام کو بچوں میں جنسی تشدد کی روک تھام کے لیے خصوصی اقدامات اور بچوں کا جنسی استحصال کرنے والوں کو سزائے موت دینے کے لیے موثر قانون سازی کی بھی ہدایت کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *